بین ڈنک نے ببل گم کھانے کا راز بتا دیا

ببل گم صرف گرائونڈ میں پرسکون رہنے کیلئے کھیل پر فوکس کر نے کیلئے استعمال کرتا ہوں، ٹیم مینجمنٹ کی جانب سے جو رول اور بیٹنگ نمبر دیا جاتا ہے میں نے وہی کرنا ہے، میری کوشش ہوتی ہے ٹیم کی ضرورت کے مطابق کھیلوں، لاہور کا کرائوڈ ہمارے لیے 12ویں کھلاڑی کی طرح ہے، جب ہم نے کھیل کے مومنٹم کو بڑھانے کی کوشش کی تو اس وقت کرائوڈ کا شور ہر بال پر بڑھ رہا تھا،لاہور قلندرز کے جارحانہ بلے باز بین ڈنک کا انٹرویو
لاہور:پی ایس ایل فائیو میں لاہور قلندرز کے بین ڈنک کا ڈنکا خوب بج رہا ہے، وہ ڈنکے کی چوٹ پر ایسے چھکے مار رہے ہیں کہ ہر کوئی ان کا فین ہو گیا ہے لیکن چھکوں سے بڑھ کر اب بین ڈنک کے ببل گم کے چرچے ہیں۔بین ڈنک نے حیرانگی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ببل مشہور ہو گئے ہیں لیکن اس میں کچھ خاص نہیں ہے، میں بس گراونڈ کے اندر پر سکون رہنے کی کوشش کرتا ہوں، اسے شاید ویڈیوز میں زیادہ دکھایا جا رہا ہے۔جارح مزاج بلے باز نے کہا کہ ببل گم شاید بری عادت ہے، مجھے اسے روکنا چاہیے لیکن میں صرف پرسکون رہنے کے لیے ایسا کرتا ہوں تاکہ جو ٹارگٹ ہے اس پر فوکس کر سکوں۔بین ڈنک نے 247.50کے اسٹرائیک ریٹ کے ساتھ صرف 40گیندوں پر 99رنز کی ناقابل شکست اننگز کھیلی، 12چھکے اور تین چوکے مارے۔وہ کہتے ہیں کہ گزشتہ تین ماہ میں ایسا دوسری مرتبہ ہوا ہے کہ سنچری مکمل نہیں کر سکا لیکن اس سے فرق نہیں پڑتا، اس بات کا اطمینان ہے کہ ان کی اننگز سے ٹیم کو فائدہ ہوا اور اسے جیت ملی اور اس جیت سے اعتماد ملا ہے اور اسی مومنٹم کو برقرار رکھنے کی کوشش کریں گے۔بلے باز کا کہنا ہے کہ مجھے ٹیم مینجمنٹ کی جانب سے جو رول اور بیٹنگ نمبر دیا جاتا ہے میں نے وہی کرنا ہے، میری کوشش ہوتی ہے ٹیم کی ضرورت کے مطابق کھیلوں، نمبر کوئی بھی ہو میں بہترین کرنے کی کوشش کرتا ہوں، مجھے اس بات کی خوشی ہوئی ہے کہ مجھے پی ایس ایل میں کھیلنے کا موقع ملا ہے۔انہوں نے کہا کہ پی ایس ایل کا معیار بہت اچھا ہے، ملکی اور غیر ملکی کھلاڑی اس لیگ میں کھیلنا چاہتے ہیں۔کراچی کنگز کے خلاف اہم میچ کے بارے میں بین ڈنک کا کہنا تھا کہ مجھے محسوس ہوا تھا کہ رنز کچھ زیادہ بن گئے ہیں حالانکہ ہم نے اچھی بولنگ کی تھی لیکن اننگز کے آخر میں زیادہ رنز بن گئے اور میچ ہمارے ہاتھ سے نکلنے لگا کیونکہ کراچی کنگز کی بولنگ اچھی تھی۔ان کا کہنا تھا کپتان سہہیل اختر نے بہت اچھی اننگز کھیلی، ان کی اننگز کو نظر انداز نہیں کرنا چاہیے، جب میں بیٹنگ کے لیے گیا تو اس وقت رن ریٹ بڑھ رہا تھا تو ایسے میں کچھ مشکل ضرور ہوتی ہے لیکن آپ بہترین کھیل پیش کرنے کی کوشش کرتے ہیں تاکہ ٹیم کے کام آئے اور یہی ہوا اور کامیابی ملی۔بین ڈنک نے کہا کہ اب فوکس اگلے تین میچوں پر ہے، بحثیت ٹیم اسی مومنٹم کو برقرار رکھنا ہے۔بین ڈنک کا کہنا ہے کہ لاہور کا کرائوڈ ہمارے لیے 12ویں کھلاڑی کی طرح ہے، جب ہم نے کھیل کے مومنٹم کو بڑھانے کی کوشش کی تو اس وقت کراڈ کا شور ہر بال پر بڑھ رہا تھا، کراڈ کا ہمارے لیے پرجوش ہونا اچھا لگتا ہے۔




اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں