وفاقی کابینہ نے حج پالیسی 2020 کی منظوری دیدی

اسلام آباد:وزیراعظم عمران خان کی زیرصدارت وفاقی کابینہ نے حج پالیسی 2020 کی منظوری دیدی ہے ، 2020ءمیں پاکستان کیلئے مخصوص حج کوٹہ ایک لاکھ 79ہزار 210افراد پر مشتمل ہوگا ، 60 فیصد کوٹہ سرکاری طورپر جبکہ چالیس فیصد نجی ٹور آپریٹرز میں تقسیم ہوگا، کابینہ کی ہدایات پر حج کے اخراجات کی مد میں واضح کمی لائی گئی ہے ، وزیراعظم عمران خان نے وزارت مذہبی امور اور وزارت خزانہ کو ہدایات جاری کیں ہیں کہ ملائیشین طرز پر حج فنڈ قائم کیا جائے تا کہ ہر طبقے کو حج کی سعادت حاصل ہوسکے ۔ وفاقی وزیر مذہبی امور پیر نورالحق قادری نے وزیراعظم کی معاون خصوصی ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان کے ہمراہ وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت وفاقی کابینہ کے اجلاس کے بعد میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ حج پالیسی اور پلان برائے سال 2020ءکابینہ کے سامنے پیش کئے گئے۔ اس پالیسی کے تحت سال 2020ءمیں پاکستان کیلئے مخصوص حج کوٹہ 179210 ہو گا جو کہ 60:40 کی شرح سے سرکاری اور نجی شعبے کیلئے مختص کیا جائے گا ساٹھ فیصد سرکاری طورپر جبکہ چالیس فیصد نجی ٹور آپریٹرز میں تقسیم ہوگا۔حج کے اخراجات کی مد میں کابینہ نے ہدایت کی کہ اخراجات میں واضح کمی لائی جائے۔ اس سال تقریباً چار لاکھ نوے ہزار اخراجات آئیں گے۔ دس ہزار سیٹیں ستر سال سے زائد بزرگوں کیلئے مختص کی جائیں گی۔ایسے افراد جو گزشتہ تین سالوں (2017، 2018ءاور 2019ئ) میں سرکاری سکیم کے تحت حج کی سعادت حاصل نہیں کر سکے ان کو یہ سعادت فراہم کی جائے گی بشرطیکہ انہوں نے ان سالوں میں نجی سیکٹر کے ذریعے حج کی سعادت حاصل نہ کی ہو۔ انہوں نے بتایا کہ بیرون ملک پاکستانیوں (اوورسیز پاکستانیز) کیلئے ایک ہزار سیٹیں مختص ہوں گی۔گورنمنٹ کوٹے میں سے 1.5 فیصد ہارڈ شپ کیسز کیلئے مختص کیا جائے گا۔پانچ سو سیٹیں ای او بی آئی اور ورکرزویلفیئر فنڈ کے تحت اداورں میں کام کرنے والے مزدوروں اور کم تنخواہوں والے افراد کیلئے ہو گا، کسی کو مفت حج نہیں کرایا جائے گا، سرکاری کوٹے کے تحت حجاج کرام کا انتخاب کمپیوٹرائزڈ قرعہ اندازی سے ہو گا، خواتین کیلئے محرم کی شرط لازمی ہو گی (فقہ جعفریہ کے مطابق پینتالیس اور اس سے زائد سال کی خواتین اس شرط سے مستثنیٰ ہوں گی)، حج بدل/نفل حج کی درخواستیں قبول کی جائیں گی بشرطیکہ درخواست گزار نے گزشتہ پانچ سالوں میں سرکاری سکیم سے حج ادا نہ کیا ہو۔ تکافل کے ذریعے پر حجاج محافظ سکیم جاری رہے گی۔ نجی شعبے میں حج گروپ آرگنائزر کو حج کوٹہ سپریم کورٹ کے فیصلے کی روسے دیا جائے گا، نجی شعبے کے کوٹے میں سے دو فیصد کوٹہ نئی حج کمپنیوں کو دیا جائے گا۔ انہوں نے بتایا کہ حج میڈیکل مشن، معاونین حجاج، وزارت مذہبی امور کا سٹاف اور سعودیہ میں مقیم معاونین حجاج کا تقرر کیا جائے گا تاکہ وہ حجاج کرام کی سہولت کاری کر سکیں۔ انہوں نے بتایا کہ اسلام آباد کے ساتھ ساتھ ”روڈ ٹو مکہ“ پراجیکٹ کراچی، لاہور، پشاور اور کوئٹہ ایئرپورٹس سے شروع کرنے پر بھی تفصیلی بات چیت ہوئی ہے ، گلگت بلستان میں بھی عارضی حجاج کیمپس قائم کئے جائیں گے۔ کابینہ نے وزارت مذہبی امور کو ہدایت کی کہ ملائیشیا کی طرزپر حج فنڈ قائم کیا جائے۔ وفاقی کابینہ نے حج پالیسی اور پلان 2020کی منظوری دیدی ہے۔
کابینہ اجلاس کے بعد میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے وزیراعظم کی معاون خصوصی برائے اطلاعات ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے کہا کہ کابینہ اجلاس میں معاشی ٹیم اورمتعلقہ اداروں نے وزیراعظم کوبریفنگ دی،کابینہ نے کمرتوڑمہنگائی کی کمرتوڑنیکافیصلہ کیاہے،قیمتوں میں استحکام کیلئے ریلیف پیکج کی منظوری دی گئی ہے ،یوٹیلیٹی اسٹورکارپوریشن کوآئندہ 5ماہ تک ماہانہ 2ارب سبسڈی فراہم کی جائیگی، گندم ،چینی ،چاول ،دالیں اورگھی کی قیمتو ں میں سبسڈی دی جائیگی۔۔فردوس عاشق اعوان نے کہا کہ مرحلہ وارسپورٹ پروگرام ترتیب دیاگیاہے،یوٹیلیٹی اسٹورپر20کلوآٹے کاتھیلا800 اورچینی70روپے کلوہوگی،چاول اوردالوں کی قیمتوں میں15سے20روپے کمی کی جائیگی۔انہوں نے کہا کہ یوٹیلیٹی اسٹورزکارپوریشن کے اشتراک سے2ہزاریوتھ اسٹورزکھولے جارہے ہیں،12کیش اینڈکیری اسٹورزقائم کیے جارہے ہیں۔ان کا مزید کہنا تھا کہ ماہ رمضان سے پہلے راشن کارڈکااجراکردیاجائیگا،چینی کی قیمت کومستحکم رکھنے کیلئے درآمدپرپابندی ختم کردی گئی۔انہوں نے کہا کہ کابینہ کے فیصلوں سے مہنگائی کی کمرٹوٹ جائیگی،قیمتیں مستحکم رکھ کرعوام کوریلیف دینے کی بات کی گئی،غریب طبقہ عمران خان کے دل کے قریب ہے۔




اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں