ٹرمپ کو نیوی کے فنڈز سے دیوار کی تعمیر سے روک دیا گیا

امریکی صدرریاست میں ایک امریکی آبدوز اڈے کے فنڈز کو میکسیکو کے ساتھ دیوار کی تعمیر کیلئے استعمال نہیں کر سکتے،وفاقی جج کا فیصلہ
سان فرانسسکو:امریکی ریاست واشنگٹن میں ایک وفاقی جج نے فیصلہ سنایا ہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ ریاست میں ایک امریکی آبدوز اڈے کے فنڈز کو میکسیکو کے ساتھ امریکی جنوبی سرحد پر دیوار کی تعمیر کے لئے استعمال نہیں کر سکتے۔واشنگٹن کے اٹارنی جنرل بوب فرگوسن نے کہا ہے کہ واشنگٹن کے مغربی ضلع کے لئے ایک امریکی ڈسٹرکٹ کورٹ کی جج باربرا روتھسٹین نے مستقل طور پر ٹرمپ انتظامیہ کے فیصلے کو روک دیا ہے اس کے ذریعے نیول بیس کٹساپ کے تقریبا 8کروڑ 90 لاکھ ڈالر کی فنڈنگ کو ری پروگرام کیا گیا ہے۔اس سے قبل کانگرس نے یہ فنڈز بنگور نیول بیس پر ایک گھاٹی اور بحالی تنصیبات کی تعمیر کے لئے منظور کئے تھے جو کہ امریکہ کے بحرالکاہل ٹرائنڈٹ بیلسٹک آبدوزوں کے بیڑے کا گھر ہے۔فرگوسن نے کہا ہے کہ جج کا یہ فیصلہ قانون کی حکمرانی اور چیک اینڈ بیلنس نظام کی ایک اہم کامیابی ہے جو ہمارے بانیوں نے ہمارے آئین میں رکھا ہے۔فرگوسن نے ستمبر 2019 میں ٹرمپ کے اس فیصلے کو چیلنج کیا تھا جس کے ذریعے وہ جنوبی سرحد پر دیوار کی تعمیر کے لئے فنڈز منتقل کرنا چاہتے تھے۔فرگوسن نے مزید کہا کہ ہم منتظر ہیں کہ یہ 8 کروڑ 90 لاکھ ڈالر اسی طرح واشنگٹن ریاست میں فوجی تعمیراتی منصوبے پر استعمال کئے جائیں جو جیسا کہ کانگریس چاہتی ہے۔واشنگٹن کے گورنر جے انسلی نے بھی جج کے فیصلے کا خیر مقدم کرتے ہوئے کہا ہے کہ عدالت اس بات پر رضا مند ہے کہ واشنگٹن ریاست کے منصوبوں کے لئے مختص رقم کو ٹرمپ کے سرحدی دیوار منصوبے کے لئے استعمال نہ کیا جائے۔یہ فیصلہ واشنگٹن اٹارنی جنرل دفتر کی جانب سے قانونی چارہ جوئی کے ذریعے ٹرمپ انتظامیہ کے خلاف 25ویں قانونی فتح ہے۔




اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں