چین: کرونا وائر س سے مزید 52افراد ہلاک

بیجنگ:چین میں نوول کرونا وائر س کے باعث مزید 52افراد ہلاک اور406نئے مریضوں کی تصدیق ہوئی ہے جس کے بعد مجموعی ہلاکتیں 2715اورمتاثرہ افرادکی تعداد 78 ہزار 64 ہو گئی جن میں سے 8 ہزار 752 افراد کی حالت تاحال تشویشناک ہے ۔بدھ کو چین کے محکمہ صحت کے مطابق چینی مین لینڈ پر صوبائی سطح کے 31 علاقوں میں منگل کے روز نوول کرونا وائرس کے 406 مصدقہ مریض سامنے آئے ہیں جبکہ 52 افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔ قومی صحت کمیشن کے مطابق تمام ہلاکتیں صوبہ ہوبے میں ہوئیں۔کمیشن نے کہا ہے کہ منگل کے روز 439 نئے مشتبہ کیس بھی سامنے آئے ہیں جبکہ منگل کے ہی روز 2 ہزار 422 افراد کو صحت یاب ہونے پر ہسپتال سے فارغ کر دیا گیا جبکہ شدید بیمار مریضوں کی تعداد 374 کی کمی کے بعد 8 ہزار 752 رہ گئی ہے۔منگل کے آخر تک چینی مین لینڈ پر مصدقہ مریضوں کی کل تعداد 78 ہزار 64 ہو گئی ہے جبکہ مرض کی وجہ سے ہلاکتیں 2 ہزار 715 ہو گئی ہیں۔کمیشن نے مزید کہا ہے کہ 2ہزار 491 افراد کے وائرس سے متاثر ہونے کا تاحال شبہ ہے۔صحت یاب ہونے پر 29 ہزار 745 افراد کو ہسپتال سے فارغ کیا جا چکا ہے۔ کمیشن نے کہا ہے کہ مریضوں کے 6 لاکھ 47ہزار 406 قریبی رابطہ کاروں کا پتہ لگایا گیا ہے جن میں سے منگل کو 14 ہزار 573 افراد کو طبی نگرانی سے فارغ کر دیا گیا ہے جبکہ 79ہزار 108 افراد تاحال طبی نگرانی میں موجود ہیں۔منگل کے آخر تک ہانگ کانگ خصوصی انتظامی علاقہ میں 2 ہلاکتوں سمیت 85 مصدقہ کیس سامنے آئے ہیں جبکہ مکا خصوصی انتظامی علاقہ میں 10 اور تائیوان میں ایک ہلاکت سمیت 31 مریضوں کی تصدیق ہو چکی ہے۔ہانگ کانگ میں 18، مکا میں 7 اور تائیوان میں 5 مریضوں کو صحت یاب ہونے پر ہسپتال سے فارغ کیا جا چکا ہے۔
سوئٹزرلینڈ میں کرونا وائرس کا پہلا کیس سامنے آ گیا ہے۔منگل کو عوامی صحت کے وفاقی ادارے (ایف او پی ایچ) کے مطابق ملک کے جنوبی حصے میں اٹلی کے ساتھ سرحد کے قریب کیس کی تصدیق ہوئی ہے۔70 سال کے مرد مریض کا تعلق اٹلی کی سرحد سے ملحقہ علاقے ٹیسینو کانٹون سے ہے جو 15 فروری کو اٹلی کے شہر میلان کے قریب ایک تقریب میں شریک تھا، مریض میں پہلی علامات 2 روز بعد ظاہر ہوئیں۔ ایف او پی ایچ کے مطابق اس کی بیماری کی تصیق جنیوا میں ایک لیبارٹری ٹیسٹ میں ہوئی۔مریض اس وقت سے اپنے اہلخانہ کے ساتھ تھا جسے اب ٹیسینو کانٹون کے علاقہ لوگانو کے کلینک میں الگ تھلگ کر دیا گیا ہے۔ایف او پی ایچ کے مطابق کانٹون اور وفاقی حکام مریض کے ساتھ رابطے میں رہنے والے دیگر افراد کا پتہ لگائے گی تاکہ انہیں قرنطینہ میں رکھا جاسکے اور اگلے 14 روز تک ان کی نگرانی کی جاسکے۔عوامی صحت کے وفاقی ادارے کے مطابق سوئٹزرلینڈ میں نوول کرونا وائرس کے پہلے کیس سے خطرے کا تخمینہ کم نہیں ہوا، فی الحال نوول کرونا وائرس سوئس عوام کیلئے معتدل خطرے کی علامت ہے۔ملک میں مشتبہ مریضوں کے تشخیصی معائنہ اور بیماری کا جلد پتہ لگانے اور دیگر بیمار افراد کی دیکھ بھال کیلئے طبی انتظامات مکمل ہیں۔سوئس وزارت داخلہ کے مطابق سوئٹزرلینڈ میں اب تک نوول کرونا وائرس کے تقریبا 300 مشتبہ مریضوں کے ٹیسٹ لئے گئے ہیں جن میں سے ابھی تک کسی میں بھی وائرس کی تصدیق نہیں ہوئی۔عوامی صحت کے وفاقی ادارے کے عہدیداران نے کہا ہے کہ سوئٹزرلینڈ میں فی الحال کانٹونز آف بیرن اور باسیل سمیت 70مشتبہ افراد کے ٹیسٹ لئے گئے ہیں،ان مریضوں میں ٹیسینو کانٹن کی تعداد بہت کم ہے، ان ٹیسٹوں کے نتائج اگلے چند گھنٹوں میں آ جائیں گے۔سوئس حکام نے پیر کو اعلان کیا تھا کہ ہمسایہ ملک اٹلی سے نوول کرونا وائرس کا پھیلا روکنے کیلئے اقدامات کررہے ہیں جبکہ سوئٹزرلینڈ میں حالات قابو میں ہیں۔عوامی صحت کے وفاقی ادارے نے کہا ہے کہ سوئٹزرلینڈ کے وفاقی کونسلر آلائن بیرسیٹ روم میں اٹلی، فرانس، جرمنی، آسٹریا، کروشیا اور سلوینیہ کے وزرائے صحت سے منگل کو ملاقات کی ہے تاکہ کرونا وائرس کا پھیلا روکنے کیلئے سرحد کے آر پار اشتراک کو مضبوط کیا جائے۔




اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں